Latest Post
Loading...

Koi Pooch Le To Mein Kia Kahon


شاعر فرحت عباس شاہ
بک آنکھوں کے پار چاند
صفحہ 83 85
انتخاب اجڑا دل
کوئی پوچھ لے تو میں کیا کہوں
اسے کیا بتاؤں
یے روز و شب تو جنم جنم پہ محیط ہیں
میرے زخم زخم دل و نظر
مجھے اس جنم میں نہیں ملے
میرے رتجگے میرے ہمسفر
میرے ساتھ آج نہیں چلے
یے مہیب وحشت کی روح ہے
کوئی بے ثبات بیاں نہیں
یے تو آتماؤں کا عکس ہے
یے تو دیوتاؤں کا دھیان ہے
یے تو جانے کیسی
صدی صدی کی اذیتوں کا گیان ہے
یے عجیب میری محبتیں
یے عجیب میرے غم و الم
یے نصیب سنگ ۓ سیاہ پر
یے ورق ورق پہ گڑے قلم
یے کڑا حصار نیا نہیں
میرا انتظار قدیم ہے
میرا اس سے پیار قدیم ہے
یے عجیب میری محبتیں

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer