Latest Post
Loading...

Wapas Tere Diyaar Mein Phir Aa Gaya Hon Mein,Lagta Hai Apne Aap Se Ukta Gaya Hon Mein


نام: ساجد جاوید ساجد
ولدیت : حاجی محمد منیر چوھدری
جائے پیدائش: گوجرانوالہ پاکستان
تاریخ پیدائش: 18 فروری 1978
موجودہ سکونت : السعودی عرب
باقاعدہ شعر کہنا 2013 سے شروع کیا
 
واپس  ترے   دیار  میں   پھر   آ   گیا  ہوں میں
لگتا  ہے  اپنے  آپ   سے  اکتا   گیا   ہوں میں

نفرت سے  دیکھتا  ہے  مجھے  شہر  اب  تمام
کچھ روز جس میں شوق سے پوجا گیا ہوں میں

جیسا   کریں   سلوک   سرِ خم   قبول    ہے 
تحویل  میں  جناب   کی  رکھا  گیا   ہوں  میں

اے یارِ کم نظر مجھے حیرت سے یوں نہ دیکھ
جرمِ  وفا میں  دار  پہ  کھینچا  گیا  ہوں  میں

تنہائی   میری  ذات  پہ  غالب  ہے  اس   طرح
اپنا  ہی عکس دیکھ  کے  ڈر سا گیا ہوں  میں

تاثیر   دیکھنا   تھی  مسیحا   کے  ہاتھ   کی
یہ زہر ہنستے ہنستے تبھی کھا گیا ہوں  میں

*************

سانس  لینا  محال   ہے  سائیں
عشق جاں  کا  وبال  ہے  سائیں

مجھ  کو  سپنا  عجیب   آتا   ہے
خود کشی بھی حلال ہے سائیں

آنکھیں اس کی غزال جیسی ہیں
زلف ریشم  کا  جال  ہے  سائیں

قیس لیلیٰ  پہ مر  مٹا  دل  سے
آپ    اپنی   مثال    ہے   سائیں

مجھ سے نظریں چُرا رہا ہے  دل
غم  میں  اتنا  نڈھال  ہے  سائیں

روپ  رب  کا  لگے ہے مکھڑا وہ
اس کی صورت کمال  ہے  سائیں

عشق  جس   پر   تمام   ہوتا   ہے
ایک    حبشی   بلال   ہے   سائیں

*************

ایک پل بھی نہ آنکھ لگتی ہے
ہجر کی شام ایسے کٹتی ہے

اپنی  ہستی  عزیز  رکھتا  ہے
عشق میں بھی انا پرستی ہے

ایک   بھی   آئینہ  نہیں    ملتا
میری بستی عجیب بستی  ہے

چار سمتوں میں دیکھ  آیا  ہوں
زندگی   ایڑیاں   رگڑتی   ہے

اب میسر نہیں میں خود کو بھی
میری  تنہائی  ہاتھ   ملتی   ہے

یہ  کہیں  وہم  تو   نہیں    میرا
تیری  تصویر  بات   کرتی   ہے

*************

چیخ  اٹھا  ہے  درد  سے   بستر
چند  آنسو  گرے  ہیں  تکیے  پر

قتل  کر  دے  بھلے  نہیں  پرواہ
جو بھی کرنا ہے تجھکو جلدی کر

ہم    شہنشاہ  تھے   زمانے   کے
اس کا  سر  تھا  ہمارے  شانے  پر

کر دیئے جائیں  گے  جدا  تن  سے
جگ  میں  مغرور  ہوئے  جتنے  سر

پھول  بھی ساتھ   قتل   ہوتے   ہیں 
توڑ  دی  جائے   کوئی   شاخ    اگر

ساری    دنیا   پرائی    لگتی    ہے
چھوڑ  آیا  ہوں  جب  سے اپنا   گھر

*************

ہجر  کا  زہر  پی   لیا   میں    نے
اب تو  زندہ  شمار  کر   مجھ   کو

جس نے ہر  طور  مجھ کو جیتا  تھا
کیسے خوش ہے وہ ہار کر مجھ کو

میں کہ دریا ہوں عشق و مستی کا
اپنی ہمت  سے  پار  کر  مجھ  کو

دیکھتا  کیا   ہے   اب   تماشا    تُو
عرش  سے  یاں  اتار  کر  مجھ  کو

عمر  ساری  تجھے   ہی   چاہا   ہے
یوں  نہ   مثلِ  غبار  کر   مجھ   کو

*************

ساجد جاوید ساجد
 

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer