Latest Post
Loading...

Kia Rukhsat Yaar Ki Ghari Thi,Hansti Hoi Raat Ro Padi Thi


غزل
کیا رخصت یار کی گھڑی تھی
ہنستی ہوئی رات رو پڑی تھی
ہم خود ہی ہوئے تباہ ورنہ
دنیا کو ہماری کیا پڑی تھی
یہ زخم ہیں ان دنوں کی یادیں
جب آپ سے دوستی بڑی تھی
جاتے تو کدھر کو تیرے وحشی
زنجیر جنوں کڑی پڑی تھی
دریوزہ گرے حیات بن کر
دنیا تری راہ میں کھڑی تھی
غم تھے کہ فرازآندھیاں تھی
دل تھا کہ فرازپنکھڑی تھی

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer