Latest Post
Loading...

Jab Hoti Rahi Dard Ki Tarseel Mukamal,Is Tuor Hoi Hai Meri Takmeel Mukamal



جب ہوتی رہی درد کی ترسیل مکمل 
اس طور ہوئی ہے میری تکمیل مکمل 

اک بار میں نے اپنے قبیلے کا بتایا 
پھر عشق نے پوچھی نہیں تفصیل مکمل 

دلی کے کئی شعر تھے مصرعے تھے دکن کے 
پھر بھی نہ ہوئی آپکی تمثیل مکمل 

اے خائنِ الفت تجھے کافر بھی پکاروں 
پر ہو نہ سکے گی تیری تذلیل مکمل 

اک جنگ میں تلوار اترتی ہے فلک سے 
اک جنگ کو کرتی ہیں ابابیل مکمل 

اس نے میرے اشکوں کو مکمل نہ گنا تھا 
پر ساتھ تو دیتی رہی قندیل مکمل 

ملتی ہے زرا سی جو تیرے لمس کی خوشبو 
ہو جاتی ہے پھر شعر میں تحلیل مکمل

مرجان سرمست

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer