Latest Post
Loading...

Sao Jahan Aur Bhi Hain Wosaat-E-Aflak Mein Gum


سو جہاں اور بھی ہیں وسعتِ افلاک میں گم 
 اور تو رہتا ہے ہر وقت یہاں خاک میں گم 

 ڈوبے رہتے ہیں تری یاد میں ہم بھی ایسے 
 کوزہ گر جیسے ہمہ وقت رہے چاک میں گم

 اُٹھنے والا ہے زمیں سے کِسی محشر کا غبا ر
 ہونے والے ہیں ستارے خس و خاشاک میں گم

 اس کو دیکھوں گا میاں جب ہی تھمے گا طوفان 
 ہے ابھی چاند مرے دیدہِ نم ناک میں گم

 رقص کرتے ہوئے درویش کو معلوم ہے سب 
 کِتنے ادوار ہیں اڑتی ہوئی اِس خاک میں گم

 مسئلے زیست کو درپیش زمیں پر ہیں اثر
 ہم ہوئے جاتے ہیں اِس حیرت ِ افلاک میں گم

عدنان اثر
 

0 comments:

Post a Comment

 
Toggle Footer